Monday, October 16, 2017
Home Blog

0 0

There are some very beautiful stories with golden marker narration skill on which attracts the readers. There are also some heart breaking stories that do deserve to be read and forwarded but with the heavy bolt of the lock, let me say, such stories remain unlocked and passed by as the breeze does. I don’t know why I started writing this piece, it is not planned, not scheduled but a sudden rush after meeting the most courageous and the most respected father of the century.

Children are the most delicate flowers of the World. They be touched softly, greeted gently, talked smoothly and hugged widely. Flowers are flowers may that be a black rose or the red one. The fragrance is the same , the beauty is the same , the attractiveness is similar and so is the uniqueness. Children are the king of their roost and their parents have always been near to soothe their wounds and repair their feelings.
I don’t have that courage to jot down what I want to. You have listened to the story. The story cum reality being neglected by the influential people, and Yes of course the Media.

Here it says a little about Sahar Batool.
Do You know how it feels when a Father cries and tells you that his daughter has been very cruelly murdered?
Do You know how it feels when a 6/7 years old girl is kidnapped to quench that lust nurtured within this filthy society?
Do You know how it feels narrating it that “My Daughter” has been forcibly despoiled which after attempts had been made failed ??? (as per doctor’s report).
Come and meet this Father if you have not.

281927_484365898372024_4918409226113498196_n


The sobbed eyes and the flagitious crime being narrated… Demands a heart to listen and not be drenched into grave grief.
How on the earth would any father tell this that his daughter’s limbs were broken away???
Which of the World’s most vicious barbaric person have this courage to hang a kid???
For God’s sake tell me how can one be the slave of his lust to this point that they make a kid their victim???
Sell your brains and brawn to the highest bidder but how can you sell your heart and soul???

Lets not go for nebulous reasons behind the scene but lets act humane atleast. You and I should die of shame after hearing to what Sahar’s father said while talking to the elected MPA of the area:
“I wish my daughter had had an accident , been under the truck or some vehicle , she would not have been excruciated.”
“Nobody came to meet me except Sardar Sadaat before you”
“My daughter was not allowed to be buried into Ganj e shuhada”
“Nobody came to console me , is it because I am not of the wealthy beings?”
Her father also said that my daughter is the pride of our community and indeed she is.
One petal has been taken away , gather the others , if you can…!

 

Here’s a monolog of the pictures people have shared in support of the young heart, as the campaign “#Justice4Sahar” goes viral across border.

“Cheap Blood”

 

 

While taking a look out there one might wonder if it’s a stupid Halloween slang or of a show that talks about vampires who consume nothing but blood and the glaze that comes with it. I’m sorry if it feels like I sound a little too grim or if my words hurt anyone but I have a story to tell today, the story of a young girl caught between the dangles of the most dangerous of lines, of her faith and race both of which deem to be cruel for the special brand she wears at the age of six.

You might have heard about different groups being attacked and killed across Pakistan for either belonging to an Ethnic race or Religion unpopular amongst the indigenous population but let me tell you about the people who deem to be nothing more than bullet practice for the forces who want nothing but amusement, Let me talk about the “HASHTAGGED HAZARA COMMUNITY” of Pakistan.
First thing’s first lets accord to why I’d call their blood the cheapest of em all, let’s run down the bullets there are to Portray the favors.

Marginalized Faith:

The “Human Rights Watch” of the UN has had to speak up about it for more than occasions rather countable or to say important enough to give a second accord. The Hazara populous of the Country is believed to be a community that belongs 99% of the Shiite Sect of Islam, who roughly accounts for more than 25% of the Population of the country. It’s no secret the sectorial community has faced countless attacks throughout the years, a community that seems to be a good practice for all the hired guns or the leagues of assassins who work for forces Far beyond this section of the blog can cover.

Tongue of betrayal:

classa

The populous may be the unfortunate of them all for having a tongue that the people of the country seem to think as a betrayal to them for even speaking it. “Farsi” the official Language of IRAN has been in the subcontinent far before Islam came to the region but now it’s like a lowly practiced and almost extinct tongue in the country. Only some communities use it as their official means of communication. The Hazara community of them all speaks a kind of Farsi that been evolved a lot in Pakistan only and can be only understood by these very people but still it seems as if they are blamed for carrying out the tongue of the fellow neighbor whom most of Pakistanis think of as their biggest enemies, even more than the “Monstrous America” (As they speak of it) in most regions.

 


The Fault in our Stars:

small eyes


 It seems it’s the community’s fault itself for having small wrinkles on their face instead of the glowing old sparkly eyes, but it’s the race that makes it an unfortunate turn of events with the last decade of the country. The community used to hold some key points in the commercial hotspots of the city in Quetta and it just happens to be that Sectarian killing is very good for business as the top hogs of the community leave for asylum in other cities or even countries of the world. It truly seems to be a fault in their starry eyes that identify them very easily for all human right’s violations.

 

International Monopoly:

It just so happens that the easiest way to cause havoc for any government in power of the country or to destabilize the strategic asset of a province, the community really is the easiest target. All you have to do to kill investment or stop some mega project starting in the area or even startle the military is to start experimenting on this community. The Banned Religious Extremists use them to fill their lust for blood & some sort of inner peace, separatists as collaborators for any separation movement, Army as their leashed dogs who’re afraid to go astray without it or countries like the US or India who can certainly gain alot by destabilizing the province. As it turns out Pakistan’s First Liquid Bomb was exploded on the very same community, which succeeded in taking more than a hundred lives.

 “HEY does that mean I can experiment on Real Humans rather than Lab rat?
-Yes It does,
-Sweet!”

Well not to be blunt but I’m sure that’s what would’ve been going through the minds of those who bombed buses and town squares packed full of people and film it, While chanting “Allah o Akbar”  (GOD IS GREAT) in the background

 

Well that’s that….

Now to the real story, I promise I would try to make it as humane as possible to not ruin your day or to keep you from keeping at whatever you’re so glad at doing, here’s Sahar Batool.

Sahar batool

She was a 6 year old kid, kidnapped, molested (RAPED) & Murdered….. o pardon me the “&” can come after murdered, let me rephrase.

Kidnapped, Molested- Raped, Murdered & then thrown in the local sewerage line….
There you go. Her parents were told by the police that the Suspect “A Molana Sahab & an active worker of the Banned SSP or political Wing (ASWJ) ” has been notified as the killer but like always – O I’m sorry let me rephrase again, so Sloppy of me . “has been notified as the killed but has SADLY escaped!”
There you have it.
So far there’s nothing from any human rights organizations in Pakistan. There’s only a Hash tag Justice4Sahar.

But then I imagine that’s the most that can come out of it. If you have even the tiniest of feel for this young petal lost to terrorism, please spread the word, spread the message, and spread her grace around.


Here’s a Showcase of some  of the Tweets on Twitter the past day.


0 0

ISLAMABAD: The Awami Workers Party (AWP) has vowed to struggle for the establishment of an egalitarian society, free from all kinds of exploitation on the basis of caste, creed, religion and gender.

The AWP passed various resolutions at the open session of its two-day federal congress here on Sunday pledging to unite all progressive forces, working class and peasants and to launch movement for real change.
“The AWP congress is taking place in an environment where millions of people were fed up with the televised squabbles of the parties representing the ruling classes abusing the narratives and slogans of the Left and have raised false hopes, because their actual agenda has nothing to do with their revolutionary rhetoric”, said a resolution.
Marking the completion of the process of the Left party building, the congress elected a 41-member federal committee and nine-member executive committee for next two years.

“The absence of a meaningful Left politics has given way to the spread of populism of the rightist parties, most recently in the form of the so-called ‘revolution’ and ‘azadi’ marches,” said AWP President Abid Hassan Minto.
He said that the AWP was formed with the objective of reviving the Leftist traditions and also inducting a new cadre of youth that can grapple with contemporary challenges and build a socialist politics for the twenty-first century.
Minto said that it was only a party that mobilised working men and women under the banner of an anti-capitalist, anti-feudal, anti-patriarchy and anti-imperialist party that could achieve transformative change in the country.
“It is a party of the twenty-first century ready to meet the daunting challenges of neo-colonial imperialist onslaught, the control of their financial institution on our society, economy and politics, the rising extremism and social and economic crises being faced by the country,” Minto said.

He urged the party leaders and workers to be ready to counter these challenges and build the party as well as launch a struggle for the rights of the common working class people, peasants, oppressed nationals and segments of society.
AWP Vice-President Dr Farzana Bari said that the condition of the working class, oppressed nationalities, women and religious minorities has deteriorated. She asserted that only the Left has a viable programme to extricate society from the clutches of capitalism, feudalism, the military-dominated state and imperialist powers.
Other leaders of the party including secretary-general Tariq Farooq and Chairman Fanoos Gujjar said the terms ‘revolution’, ‘inqilab’ and ‘azadi’ have been thrown about recklessly, as the sit-ins led by Imran Khan and Tahirul Qadri have occupied much of the country’s imagination. Can there be a true ‘revolution’ that is led by landlords, industrialists and religious clerics and devoid of organized working class participation, they questioned.
The congress, through a resolution, called for the release of AWP leader Baba Jan and eight other activists and the annulment of their sentencing of life imprisonment by an anti-terrorist court in Gilgit. They also demanded release of the AWP leader in Sheikhupura and labour leaders in Faisalabad.
The AWP endorsed the right of independence and self-determination of all nationals including Jammu and Kashmir, and Gilgit-Baltistan. The congress also called for restoration of trade unions and ban on retrenchment of employees from public and private organisations.

The party also passed a resolution calling for building good relations with the neighbouring countries and making the South Asian region free from nuclear arsenal.
After the concluding session, workers of the Awami Workers Party held a rally starting from Zero Point to Aabpara Chowk. Hundreds of party workers, katchi abadi residents, trade union workers, farmers, students and women participated in the rally.

The rally was also addressed by Fanoos Gujjar, Akhtar Hussain, Robina Jameel, Bakhshal Thalho, Farooq Tariq, Aasim Sajjad, Farzana Bari, Alia Amirali, and Nisar Shah.
The party’s cultural wing presented songs, classical dance by Amna Mowaz, Areib Azhar, Ammar Rashid.
Published in The Express Tribune, September 29th, 2014.

0 0

[تحریر: لال خان]
کاوش : غلام نبی کریمی

آج پاکستان بھر میں جس طرح سماجی خلفشار‘ محرومی‘ استحصال‘ جرائم‘ غربت‘ اور ذلت کی انتہاہوچکی ہے اس سے عوام صرف بیزار اور خوار ہی نہیں ہیں بلکہ شدید برہم بھی ہیں۔ اس اذیت ناک کیفیت میں عوام کی تبدیلی کی خواہش اب سلگنا شروع ہوگئی ہے۔ اس کی حرارت سیاست، ریاست اور معاشرے میں بڑھتی ہوئی تپش، ہلچل اور انارکی کی فضا پیدا کررہی ہے۔ اس پس منظر میں یہ کوئی حادثاتی امر نہیں کہ اس نظام اور دولت کی سیاست کے بہت سے جغادری ’’انقلاب‘‘ کی رٹ لگائے جارہے ہیں۔ اب یہ رٹ مختلف حرکات وسکنات کی شکل میں معاشرے میں انتشار کو مزید شدیدکررہی ہے۔ جہاں اس ملک کے شہباز شریف سے لے کر الطاف حسین تک جیسے حکمران اس ظالم نظام کے مسندِ اقتدار اور دولت کی ریل پیل میں رہتے ہوئے بھی انقلاب کی نعرہ بازی سے گریز نہیں کرتے ان کے بارے میں اتنا ہی کافی ہے کہ ’’کوئی بتلائے کہ ہم بتلائیں کیا؟‘‘ عمران نیم اقتدار اور طاہر القادری دولت کے انباروں پر بیٹھ کر بھی ’’انقلاب‘‘ کرنے کا ناٹک رچا رہے ہیں۔ لیکن المیہ یہ ہے کہ نہ تو ان کے انقلابوں کا کوئی نام ہے اور نہ ہی کسی کو اس کے کردار کا پتہ ہے۔ حتیٰ کہ ان حکمرانوں کی تمام دانش کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے کہا جا سکتا ہے کہ ان کو شاید بہت زیادہ ’’جنرل نالج‘‘ ہوگالیکن ان کو آج کے عہد اور نظام کے بنیادی بحران کی وجہ اور تشخیص کے ساتھ ساتھ ا س کو بدلنے والے انقلاب کے بارے میں یقیناًکوئی علم نہیں۔ ان کے پروگرام جو اہداف اور مقاصد بیان کررہے ہیں اس میں کہیں بھی اس استحصالی سرمایہ دارانہ نظام کے خاتمے کے لیے درکار انقلاب کی سائنسی بنیادوں کا شائبہ تک نظر نہیں آتا۔ انقلاب وہ عمل ہوتا ہے جس سے صرف حکومتیں اور اقتدار ہی نہیں بدلتابلکہ حکمران طبقات کا پورا نظام اور اس کو چلانے والے ڈھانچے‘ سوچیں‘ اخلاقیات اور ریت ورواج بدل جاتے ہیں۔
آج کے سماج کی بنیادیں جس سرمایہ دارانہ معیشت پر مبنی ہیں وہ معاشرے کو مجموعی طور پر ترقی دینے اور اس کے ارتقا کو آگے بڑھانے کی اہلیت کھوچکی ہے۔ کارل مارکس نے اسکی انتہائی گہری سائنسی وضاحت کرتے ہوئے تحریر کیا تھا کہ ’’جب بھی کوئی معاشی نظام اور اسکے ذرائع پیداوار سماجی ترقی دینے سے قاصر ہوجاتے ہیں تو معاشرہ ایک جمود کا شکار ہوجاتا ہے۔ یہ جمود ایک بحران کو جنم دیتا ہے جو سماجوں میں بغاوتیں پیدا کرتا ہے۔ یہیں سے وہ انقلاب ابھرتے ہیں جو اس معاشرے کی معاشی سماجی اور اقتصادی بنیادوں کو یکسر بدل دیتے ہیں۔‘‘ مارکس نے اس کو سوشلسٹ انقلاب کا نام دیا تھا۔ لیکن کوئی بھی سوشلسٹ انقلاب اس وقت تک کامیاب اور کارآمد نہیں ہوتا جب تک اس میں محنت کشوں کے ایک بڑے حصے کی براہ راست شمولیت نہ ہو۔ محنت کش طبقہ ہر وقت اور ہر دور میں اس ذہنی اور شعوری کیفیت میں نہیں ہوتا۔ وہ اس قسم کی صورتحال میں کبھی کبھار داخل ہوتا ہے۔ اس لیے انقلابات تاریخ کے معمول کے نہیں بلکہ غیر معمولی اور کبھی کبھی جنم لینے والے حالات میں برپا ہوتے ہیں۔ انسانی تاریخ کے عظیم ترین بالشویک انقلاب (اکتوبر 1917ء) کے قائد ولادیمیر لینن نے ایک انقلابی صورتحال کی جو علامات اپنی مشہورِ زمانہ کتاب ’’ریاست اور انقلاب‘‘ میں بیان کی تھیں وہ کچھ یوں ہیں:

*حکمران طبقات کے مختلف دھڑوں کے درمیان تنازعات‘ تضادات اور تصادموں کا شدت اختیار کرجانا۔
*درمیانے طبقے کا شدید اضطراب اور ہلچل کی کیفیت میں مبتلا ہونا اور کبھی حکمرانوں اور کبھی محنت کشوں کی جانب جھولنا۔ *محنت کش طبقہ اپنی تاریخ اور روایات میں ثابت کرچکا ہو کہ وہ انقلابی تحریکوں کو ابھار کر ان میں ہراول کردارا دا کرسکتا ہے۔ *ٹھوس نظریاتی‘ سیاسی‘ تنظیمی اور لائحہ عمل وتناظر کی بنیادوں پر سرگرم ایک انقلابی پارٹی کی موجودگی۔ عام حالات میں محنت کش حکمران طبقات کی رسومات‘ اخلاقیات‘ قدروں ریت ورواج‘ عادات واطوار اور ثقافتی وسیاسی رجحانات کی پیروی کرتے ہیں۔ اس لیے مارکس نے دو مختلف ادوار کی کیفیتوں میں محنت کش طبقے کے وجود کی وضاحت کی تھی۔ ایک وہ جب محنت کش ’’اپنے اندر‘‘ ایک طبقہ ہوتے ہیں اور پھر انقلابی صورتحال، جب وہ ’’اپنے لیے‘‘ ایک طبقہ بنتے ہیں۔ محنت کش عوام کے شعور کی ان دونوں کیفیتوں میں زمین آسمان کا فرق ہوتاہے۔

اس قسم کے سائنسی انقلاب میں بنیادی ہدف پیداوار کے بنیادی مقصد کو تبدیل کرنا ہوتا ہے۔ سرمایہ دارانہ نظام میں ہر ضرورت اور جنس کی پیداوار کا مقصد منافع اور شرح منافع کا حصول اور دولت کا اجتماع ہوتا ہے۔ منصوبہ بندی پر استوار ایک سوشلسٹ معیشت میں پیداوار میں سے منافع کا عنصرختم کردیا جاتا ہے اور ہرشے کے بننے کی وجہ انسانی ضرو ریات کی تکمیل ہوتی ہے۔ وہ بے پناہ وسائل جو حکمران اور سامراج نسل در نسل لوٹتے رہے ہیں ان کو ضبط کرلیا جاتا ہے۔ تمام وسائل،ذخائر اور دولت کی مساوی تقسیم ہی نہیں ہوتی بلکہ سارے معاشرے او رخطوں کو مساوی بنیادوں پر ترقی دے کر برابری کے درجے پر لانے کا منصوبہ ہوتا ہے۔ اس سارے عمل میں انقلابی پارٹی اور سوشلسٹ جمہوریت کے ڈھانچے، اس نئی محنت کش ریاست کے انتظام اور اقتدار کا فریضہ انجام دیتے ہیں جو ان مقاصد ا ور اہداف کے حصول کو یقینی بناتی ہے۔ دولت کی وجہ سے سماجی اور سیاسی اونچ نیچ کے خاتمے کے بعد جو جمہور کی جمہوریت جنم لیتی ہے وہ ہر گلی، محلے، دیہات، فیکٹریوں اور کارخانوں کی پنچائتوں سے شروع ہو کر اوپر تک ایک ایسے ڈھانچے کو جنم دیتی ہے جس سے عوام کا ریاست، سیاست اور خصوصاً معیشت پر جمہوری کنٹرول ہوتا ہے۔ کسی ریاستی اہلکار کی اجرت کسی ہنر مند مزدور سے زیادہ نہیں ہوسکتی۔ ہر اہل کار ان پنچائتوں اور ان کے منتخب شدہ بالائی کے اداروں کے سامنے جوابدہ ہوتا ہے اور پانچ سال یا کسی مخصوص مدت کے لیے منتخب ہونے کی بجائے اس میں مسلسل تبدیلی کا ایک سلسلہ جاری رہتا ہے۔ لیکن انقلابی پارٹی کسی مقبول سے مقبول ترین فرد کی انفرادی قیادت میں بھی نہیں بن سکتی۔ اس کے لیے مارکسی نظریات سے لیس ایک اجتماعی قیادت درکار ہوتی ہے جو جمہوری مرکزیت کے طریقہ کار کے تحت تاریخ کے حصار کو موڑ دینے والے انقلاب کی قیادت کی اہل ہوسکتی ہے۔
پاکستان میں ہمیں اس قسم کی سماجی صورتحال 1968-69 ء کے انقلاب کے دوران بہت واضح انداز میں ملتی ہے۔ گو عوام کی اس انقلابی میراث کو مخدوش کرنے کی ہر ممکن کوشش کی گئی ہے لیکن اس تحریک نے ثابت کیا تھا کہ اس قسم کا انقلاب یہاں بھی ممکن ہے۔ اسی انقلاب سے متاثر ہوکر ہندوستان کے مشہور صحافی اور پارلیمنٹرین کلدیپ نیر نے ایک مرتبہ کہا کہ ’’ہندوستان سے پاکستان میں نہیں بلکہ پاکستان کے ذریعے ہندوستان میں انقلاب آئے گا۔‘‘

آج پاکستان میں ظاہری طور پر عوام میں بے حسی اور بدظنی پائی جاتی ہے لیکن سطح کے نیچے ایک لاوا پک رہا ہے۔ حکمران طبقات میں لڑائیاں شدت کی انتہاؤں پر ہیں۔ درمیانے طبقہ اضطراب اور معاشی زخموں کے درد سے کراہ رہا ہے۔ محنت کش طبقہ 1968-69ء میں اپنی انقلابی صلاحیت ثابت کرکے اس کی روایات کو امر کرچکا ہے۔ لیکن ابھی تک ایک انقلابی مارکسسٹ لینن اسٹ پارٹی کا فقدان ہے۔ شاید وہ ابھی تیاری کے مراحل میں ہے۔
جعلی انقلابوں کی بوچھاڑ میں گھرے یہاں کے نوجوانوں اور محنت کشوں کا یہ حق ہے کہ ان کو یہ ادراک ملے کہ ’’انقلاب آخر ہوتا کیا ہے؟‘‘ انقلاب کی تعریف انقلابِ روس کے معمار لیون ٹراٹسکی نے ان الفاظ میں کی تھی:

’’عوام کی تاریخی واقعات میں براہِ راست مداخلت ہی کسی بھی انقلاب کی سب سے نمایاں خوبی ہوتی ہے۔ عام دنوں میں ریاست، خواہ اس پر بادشاہت براجمان ہو یا جمہوریت، خود کو عوام سے بے نیاز رکھتی ہے اور مورخین سربراہان مملکت‘ وزرا‘ دانشوروں اور صحافیوں کے حوالے سے ہی تاریخ کو مرتب کرتے ہیں۔ ۔ ۔ لیکن جب وہ وقت آجاتا ہے کہ یہ فرسودہ نظام عوام کے لیے ناقابلِ برداشت ہوجاتا ہے تو وہ سبھی حددو وقیود پامال کرتے ہوئے ان لوگوں کو سیاسی دھارے سے نکال باہر کرتے ہیں‘ اپنے روایتی نمائندوں کو اٹھا کر ایک طرف کردیتے ہیں اور پھر اپنی مداخلت وشمولیت سے ایک نئی طرزِ حکومت کی بنیادیں رکھتے ہیں۔ یہ عمل اچھا ہے یا برا؟اس کا فیصلہ اخلاقی مبلغین کرتے پھریں۔ ہمیں تو ان کے حقائق سے ویسے ہی سروکار ہے جیسے وہ اپنے معروضی حالات کی کوکھ سے جنم لیتے اور تشکیل پاتے ہیں۔ ایک انقلاب کی تاریخ ہمارے لیے‘ سب سے پہلے‘ حکمرانی کے عمل میں عوام کا دخل ہوتا ہے جو وہ اپنے مقدر بدلنے کے لیے کرتے ہیں۔‘‘

متعلقہ:

0 0

تحریر: ڈاکٹر لال خان
کاوش : غلام نبی کریمی

جنوبی ایشیا میں یادگار واقعات کی مناسبت سے کئی دن ہر سال منائے جاتے ہیں۔ تاہم ایک واقعہ ایسا ہے جسے تاریخ کے اوراق میں سے کھرچ دینے کی پوری کوشش حکمران طبقے نے کی ہے۔ یہ 27 اپریل 1978ء کو افغانستان میں برپا ہونے والا ثور انقلاب ہے۔ سامراجی میڈیا، حکمران طبقے کے دانشور اور سرکاری تاریخ دان اس انقلاب سے پہلے اور بعد میں جنم لینے والے واقعات کو مسخ کر کے عوامی شعور پر سے مٹا دینے کی سعی میں جھوٹ اور منافقت کی ہر حد تک گئے ہیں۔ اس حقیقت پر پردہ ڈال دیا گیا ہے کہ جنوبی ایشیا کی تاریخ میں سب سے ریڈیکل سماجی، معاشی اور ثقافتی اصلاحات کا آغاز ثور انقلاب کے بعد افغانستان میں ہوا تھا۔ ان جرات مندانہ اقدامات کا مقصد صدیوں سے مقامی اشرافیہ کے استحصال، پسماندگی، غربت اور مختلف سامراجی قوتوں کی اقتصادی زنجیروں میں جکڑے افغان عوام کو آزاد کرواکے ایک جدید اور حقیقی معنوں میں انسانی سماج کی تعمیر کا آغاز کرنا تھا۔ ثور انقلاب کی میراث آج بھی مذہبی بنیاد پرستی کی بربریت، سامراجی جارحیت اور جرائم پر مبنی سرمایہ داری کے گھٹا ٹوپ اندھیرے میں امید اور روشنی کے مینار کا درجہ رکھتی ہے۔

حکمران طبقے کے تاریخ دان اوردانشور ور دانستہ طور پر ثور انقلاب کو سوویت یونین کی فوج کشی کے ساتھ گڈ مڈ کردیتے ہیں۔ اس حقیقت کو چھپایا جاتا ہے کہ سوویت فوجیں ثور انقلاب کے 18 ماہ بعد 29 دسمبر 1979ء کو افغانستان میں داخل ہوئی تھیں۔ انقلابی حکومت کے پہلے دو سربراہان نور محمد ترکئی اور حفیظ اللہ امین سوویت یونین میں قائم افسرشاہانہ ریاست کے بارے کسی خوش فہمی کا شکار نہ تھے۔ انقلاب کے یہ دونوں قائدین سوویت یونین سمیت کسی بھی ملک کی افغانستان میں سیاسی یا عسکری مداخلت کے سخت خلاف تھے۔ پڑوس میں آزادانہ طور پر پنپتا ہواانقلاب سوویت بیوروکریسی کے سیاسی مفادات پر ضرب لگا سکتا تھا چنانچہ انقلاب کی حقیقی قیادت کا خاتمہ ضروری تھا۔ 14 ستمبر 1979ء کو نور محمد ترکئی افغان صدارتی محل میں پراثرار طور پر مردہ پائے گئے۔ ان کی موت یا قتل کے بارے میں امریکی سامراج اور سٹالن اسٹوں کی جانب سے کئی تھیوریاں پیش کی جاتی ہیں لیکن قوی امکان یہی ہے انہیں سوویت KGB نے قتل کروایاتھا۔ نور محمد ترکئی کے بعد حفیظ اللہ امین کو زہر کے ذریعے قتل کرنے کی کئی ناکام کوششیں کی گئیں۔ 27 دسمبر 1979ء کو 600 سے زائد سوویت کمانڈوز نے ’’آپریشن Strom-333‘‘ کے تحت تاجبگ محل پر حملہ کر دیا۔ اس آپریشن میں حفیظ اللہ امین کو ان کے بیٹے اور 200 محافظین سمیت قتل کردیا گیا۔ اس واقعے کے دو دن بعد سوویت فوجیں باقاعدہ طور پر افغانستان میں داخل ہوئیں۔

یہ کہنا غلط نہ ہو گا کہ ثور انقلاب ’’پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی آف افغانستان‘‘(PDPA) سے ہمدردی رکھنے والے افغان فوج کے افسران اور جوانوں نے مسلح بغاوت کے ذریعے ’’اوپر‘‘ سے برپا کیا تھا۔ مارکسی نقطہ نظر سے یہ کوئی کلاسیکی سوشلسٹ انقلاب نہ تھا اور PDPA کئی طرح کی نظریاتی، تنظیمی اور سیاسی کمزوریوں کا شکار تھی۔ لیکن اس حقیقت سے انکار ممکن نہیں ہے یہ انقلاب خطے کی تاریخ میں جاگیر داری کی ذلت، قبائلی پسماندگی، مذہبی جبر اور سرمایہ دارانہ استحصال کے خلاف سب سے بڑی بغاوت تھی۔ نسل در نسل سود خوروں اور جاگیرداروں کے استحصال کا شکار بننے والی افغان عوام کی اکثریت نے اس انقلابی تبدیلی کو خوش آمدید کہا تھا۔

سردار داؤد کا تختہ الٹنے کے بعد ملٹری انقلابی کونسل کی جانب سے نافذ کئے گئے انقلابی قوانین ثور انقلاب کی حقیقی روح اور اساس کو واضح کرتے ہیں۔ انقلابی حکم نامے میں شامل ضابطہ نمبر 6 کے ذریعے غریب کسانوں کے ذمے سود خوروں اور جاگیرداروں کا تمام واجب الادا قرضہ سود سمیت منسوخ کردیا گیا۔ یہ بے زمین کسان نسل در نسل سودی قرضے کی دلدل میں پھنسے ہوئے تھے اور ایک اندازے کے مطابق اس قرضے کا مجموعی حجم افغانستان کی سرکاری معیشت سے بھی زیادہ تھا۔ ضابطہ نمبر 7 کے مطابق ’’قانون کی نظر میں خواتین اور مردوں کو برابری کو یقینی بنایا جائے گا۔ بیوی کو شوہر سے کمتر بنانے والے جاگیر دارانہ رشتوں کا خاتمہ کیا جائے گا۔‘‘ پیسے کے بدلے لڑکیوں کی شادی، زبردستی کی شاد ی اور بیوہ کی دوبارہ شادی کی راہ میں رکاوٹ بننے والے قبائلی رسم و رواج کو جرم قرار دیا گیا۔ اس کے علاوہ شادی یا منگنی کی کم سے کم عمرکو لڑکیوں کے لئے 16 سال جبکہ لڑکوں کے لئے 18 سال مقرر کر کے بچپن کی شادیوں پر پابندی لگا دی گئی۔ ضابطہ نمبر 8 کے تحت جاگیر داروں اور شاہی خاندان کی تمام تر زمین کو بغیر کسی معاوضے کے ریاستی ملکیت میں لیتے ہوئے بے زمین اورغریب کسانوں میں تقسیم کردیا گیا۔ اس قانون کا سب سے اہم مقصد ’’ملک کے سماجی و معاشی ڈھانچے میں سے جاگیرداری اور قبل از جاگیر داری کے رشتوں کا خاتمہ‘‘ تھا۔

۔
انقلابی حکومت کے دوسرے ریڈیکل اقدامات میں پانی کی منصفانہ تقسیم اور کسانوں کی اشتراکی انجمنوں کا قیام شامل تھا۔ اس کے علاوہ ناخواندگی کے خاتمے کے لئے بڑے پیمانے کی مہم شروع کی گئی جس کے تحت 1979ء سے 1984 تک 15لاکھ ان پڑھ لوگوں کو لکھنا پڑھنا سکھایا گیا۔ 1984ء میں تقریبا چار لاکھ مزید افراد 20000 خواندگی کورسوں کے ذریعے لکھنا پڑھنا سیکھ رہے تھے۔ حکومت کا ہدف 1986ء تک شہری علاقوں جبکہ 1990ء تک پورے افغانستان میں سے ناخواندگی کا خاتمہ تھا۔ PDPA حکومت نے ان تمام اقدامات کا آغاز سوویت فوجوں کی مداخلت سے پہلے کیا تھا۔ افغان عوام کی تقدیر بدلنے کے لئے انہیں سرمایہ دارانہ ریاست کا خاتمہ کرنا پڑا تھا۔ ثور انقلاب نے ایک بار پھر ثابت کیا کہ سابق نوآبادیاتی ممالک کا ناتواں اور خصی سرمایہ دار طبقہ معاشی اورثقافتی طور پر اس قابل نہیں ہے کہ سرمایہ دارانہ جمہوری انقلاب کے انتہائی بنیادی فرائض بھی ادا کر سکے۔

سی آئی اے سے قریبی تعلقات رکھنے والا امریکی سیاستدان چارلی ولسن افغان جنگجوئوں کے ساتھ۔ ڈالر مجاہدین کو جدید اسلحہ اور پیسہ فراہم کرنے میں چارلی ولسن نے اہم کردار ادا کیا۔
ثور انقلاب کے بعد کی جانی والی ریڈیکل اصلاحات اور انقلابی اقدامات پورے خطے میں جاگیر داری، سرمایہ داری اور سامراجی مفادات کے لئے خطرہ تھے۔ اسلام آباد سے لے کر ریاض، لندن اور واشنگٹن تک، طاقت کے ایوانوں میں خطرے کی گھنٹیاں بجنے لگیں۔ واضح امکانات موجود تھے کہ افغانستان میں انقلاب کی حاصلات سے متاثر ہو کر پورے خطے کے عوام سامراج اور اس کے استحصالی نظام کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں گے۔ نومولود انقلاب کو کچل دینے کا فیصلہ کیا گیا اور سرمائے کے بتوں کو پاش پاش کرنے والے ’’کیمونسٹ کافروں‘‘ کے خلاف ’’سامراجی جہاد‘‘ کی پالیسی ترتیب دی گئی۔ امریکی سی آئی اے نے پاکستانی خفیہ ایجنسیوں کی مدد سے اپنی تاریخ کے سب سے بڑے خفیہ آپریشن کا آغاز کیا۔ ’’آپریشن سائیکلون‘‘ سوویت فوجوں کی آمد سے چھ ماہ قبل شروع ہواتھا۔ سامراج کے گماشتے ضیا الحق نے پیٹرو ڈالروں کے ایندھن سے بنیاد پرستی، فرقہ واریت، جرائم اور دہشت گردی کی وہ آگ بھڑکائی جس میں پورا خطہ آج بھی جل رہا ہے۔ ڈالر جہاد کی مالی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے منشیات اور اسلحے کی سمگلنگ کا وسیع و عریض نیٹ ورک تشکیل دیا گیا۔ اس خطے میں ہیروئن بنانے کی تکینک سب سے پہلے سی آئی اے نے متعارف کروائی تھی۔ منشیات اور جرائم کے اس کالے دھن کا دودھ پی کر بنیاد پرستوں کے وہ گینگ جوان ہوئے جنہیں آج کل ’’طالبان‘‘ کہا جاتا ہے اور جو اب پوری طرح اپنے والدین کے قابو میں بھی نہیں رہے ہیں۔ انقلاب کی ناکامی سماج کو رجعت اور پسمانگی کی گہری کھائیوں میں دھکیل دیتی ہے۔ افغانستان میں بھی یہی ہوا ہے۔ سامراج کی اس رد انقلابی جنگ نے 36 سالوں میں افغانستان کے ساتھ ساتھ پاکستان کے عوام کو برباد کر کے رکھ دیا ہے۔

اس خطے کا ماضی اور حال پتا دیتا ہے کہ ہزاروں بندھنوں میں ایک دوسرے سے جڑے پاکستان اور افغانستان کا انقلاب بھی مشترک ہوگا۔ افغانستان میں انقلاب اور رد انقلاب نے ڈیورنڈ لائن کو بھی جعلی اور بے معنی بنا دیا ہے جسے برطانوی سامراج نے مصنوعی طور پر پشتونوں کو تقسیم کرنے کے لئے کھینچا تھا۔ ا ثور انقلاب کے قائد غیر متزلزل طور پر سوشلزم اور انقلاب کے بین الاقوامی کردار کے قائل تھے۔ 27 اپریل 1979ء کو ثور انقلاب کی پہلی سالگرہ کے موقع پر کابل میں تقریر کرتے ہوئے انہوں نے کہا تھا ’’میرے پیارے ہم وطنوں، فوج کے بہادر جوانوں، پشتون اور بلوچ بھائیوں، ایشیا، افریقہ، یورپ، امریکہ اور اس خطے کے محنت کشوں کو ثور انقلاب کی پہلی سالگرہ مبارک ہو۔ ثور انقلاب صرف افغانستان کے محنت کشوں اور مسلح سپاہیوں کا انقلاب نہیں ہے۔ یہ سارے جہان کے محنت کشوں اور محکوموں کا انقلاب ہے۔ خلق پارٹی (PDPA) کی قیادت میں مسلح سپاہیوں کی مدد سے برپا ہونے والا یہ انقلاب پوری دنیا کے محنت کشوں کی عظیم کامیابی ہے۔ 1917ء کے اکتوبر انقلاب نے پوری دنیا کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔ ہمارے انقلاب نے اکتوبر انقلاب سے رہنمائی اور شکتی حاصل کی ہے اور ایک بار پھر پوری دنیا کو ہلا کے رکھ دیا ہے۔‘‘ نور محمد ترکئی کے یہ الفاظ آج بھی افغانستان، پاکستان اور پورے خطے کے محنت کشوں اور نوجوانوں کو طبقاتی جڑت اور جدوجہد کا پیغام دے رہے ہیں۔ ایک سوشلسٹ انقلاب کے بغیر غربت، محرومی، دہشت گردی، قتل و غارت گری، سامراجی جارحیت اور مذہبی بنیای پرستی کا خاتمہ ممکن نہیں ہے!

0 0

تحریر : غلام نبی کریمی

کوئیٹہ شہر اور کالعدم تنظیموں کے حرکات

چند دن پہلے کی بات ہے کہ ملک بھر سے کالعدم جماعت سپاہ صحابہ کے صوبائی سربراہاں کوئیٹہ
آئیں اور ہمیشہ کی طرح اپنی قوت دیکھانے کو کوشش کی۔ اس دفعہ کوئیٹہ کے عین اور مصروف
شہراہ جوائنٹ روڈ پر مولوی اورنگ زیب فاروقی اوربلوچستان کے سرغنہ رمضان مینگل نے امیر معاویہ
چوک کا افتتاح کیا۔
آپ اس تصویر میں بخوبی دیکھ سکتے ہیں کہ بلکل ساتھ ہی ایف سی کی چیک پوسٹ ہے اور اسکے سامنے
کالعدم یعنی دہشت گرد جماعت کا جھنڈا بنا ہوا۔ اس تصویر کو دیکھنے سے کہی سوالات اٹھتے ہیں۔

کیا ہمارے سیکولر وزیر اعلیٰ کو علم نہیں ؟
کیا کالعدم سپاہ صحابہ اس قدر طاقت ور ہوچکی ہے کہ حکومت انکے سامنے بے بس ہے ؟
کسی کالعدم حماعت کو کس نے یہ حق دیا کہ وہ چوک کا افتتاح کرائے اور مرضی کا نام رکھے ؟
انتظامہ کہاں ہیں ؟

اگر بات صرف چوک تعمیر کرنے کی حد تک ہوتی تو شائد ہی ہم درگزر کر لیتے مگر کالعدم جماعت
کے یہ نمائندے سرے عام کافر کافر کے نعرے لگا کر شہر کوئیٹہ کو زہر آلود کر رہے ہیں۔ ہمیشہ
کی طرح باہر کے کسی مولوی کو بلا کر شہر کے اندرونی حالات کو خراب کرنے کی کوشش کی گئی۔
اس سے بھی چند دنوں پہلے کی بات ہے اسی کالعدم تنظیم نے اسرائیلی بربریت کے خلاف جلوس اور
ریلیاں نکالی۔ عین شہر کے بیچھ پہنچ کر انہوں نے کھلے عام کافر کافر کے نعرے بلند کئے۔
اب ان عقل کے دشمنوں سے کوئی پوچھے احتجاج اسرائیل کے خلاف اور نعرےایک فرقے کے خلاف۔

اس پر ڈاکڑ مالک کی انتظامیہ کہاں ہے ؟
ایک سیکولر وزیر اعلیٰ کی حکومت میں یہ مذہنی جنونی اس طرح سے تفرقہ پھیلا رہے ہیں ؟
ٹارگٹ کللنگ روکنا تو حکومت کے ہاتھ میں نہیں مگر کم از کم شہر کے اندر ان نفرتآمیز نعروں
لگانے والوں کو تو چارج کرو۔ آئینی اعتبار سے بھی یہ جائز نہیں کہ کوئی خاص فرقہ دوسرے فرقوں
کو خارج از دین کریں۔

ڈاکڑ مالک صاحب کو ان سوالات کے جوابات دینے ہوگے ، شاید یہ کالم ان تک نا پہنچے مگر یہ ہمارا فرض ہے
کہ ایک شدت پسند اور کالعدم تنظیم کے حرکات پر احتجاج کرے۔

ہمیشہ کی طرح اس مختصر کالم کا اختتام ایک شعر سے کر رہا ہوں۔

سینوں سے دیں نکل کر سیاست میں آگیا
ہر چوک پر ملاوں کا گھر دیکھ رہا ہوں { کریمی }

https://www.facebook.com/KarimiJaffary

    0 0

    Assalam o Alaikum Brothers, Sisters, Friends and Everybody who’s reading this. What I’m writing here might be something which I will be writing in the most motivated mood I have ever been in.

    The life I have spent which is not too much when it comes to age is, in my opinion, a wasted one till now and I’m serious about this even though I have been able to achieve a lot of things throughout the entire course of my life but those achievements were mere materialistic. What I have been deprived of achieving is the spiritual existence, the ultimate goal of human kinds’ creation, the highest and the most important of all achievements and I find myself not alone in this wilderness of confusion and illusion.

    I suppose this is the right time and nevertheless the best time for me to realise rising up from the dark grave which I have dug for myself and have been sleeping in for all my life. In spite of achieving so much in my life, I have never been satisfied with what I’ve done. All I’ve done was to be self centred and greedy and I don’t see any shame in uncovering this fact in public. I’ve been so sinister at times that if you know about them you would gladly want to help the world get rid of me or at least abandon any relation with me but in fact if you ask most of my friends and those who know me well, they will probably tell you how good I am.

    Well isn’t that hypocrisy then? It surely is and that is what I don’t want to be because in my opinion it’s better to be known with a single face good or bad than having two faces to shuffle at different points. Yet I can see that there is always a way to recover and climb back up to the light, I can see that there is a ray of a guiding light that tells me to follow it. And for your knowledge I’ve not been compelled to write this article after watching a very motivational speech or movie, though I really recommend you to watch ” The Last Samurai”, neither am I writing this article without any motive so be sure about it’s originality. And so I want to assure the reader ” Hey, you can be as bad and sinister as one can be but be sure that if I haven’t committed more sins than you then without any doubt I haven’t committed less sins than you and I promise you that.” But what will make you and me different? The answer is not the amount of sins or good deeds we have done but It’s the journey towards realisation, the journey to know what your real purpose is and that are you or are you not wasting your life?

    I have decided to opt for the journey and you can be my companion in it and it is not necessary for us to start together but we surely can meet at a certain point in our journey.

    I was bad, evil, sinister, forgetful, ignorant and Unthankful  but still you see I can decide for my self and my future. Anyone can do it and that includes YOU too. It’s never too late, learn from the past and do the best for yourself.

    It is hard but it is POSSIBLE!! Everything lies in your hands.

    0 0

    I want to be a kid once more.

    Disparity, Confusion, Illusion, Fear, Destruction, Catastrophe, Disaster, Misery, depravity.

    These are the words that explain my society today and the condition we are living in. Everywhere I look I can see people who seemingly are happy with their materialistic life but deep inside they don’t look to be satisfied by any chance let alone being happy.

    It’s Chaand Raat. The night before Eid-ul-Fitr which is one of the two Annual big events/festivals that Muslims all over the world celebrate. But now Celebration has no logical meaning here in my country Pakistan and specially in my city Quetta. Since Quetta is a city comprised of a population with a variety of ethnicity’s and tribes. I, belonging to the Hazara-Shia tribe don’t have a vast knowledge of what other neighboring tribes have to say about the upcoming event but what I have analysed in recent days is that for us ( The Hazara’s ) this event has turned into a mere tradition to be followed with very less or no Joy in it.

    I remember when I was a kid years ago the circus which we went to, to spend our Eidi in used to be so colorful, so astonishing, so amazing and so much fun but now that I see, that circus is no more a part of the new generation’s Go-to list.

    Atleast 20 houses which should be enjoying the festival aren’t. On the contrary they are crying and a sad environment surrounds their house, why?

    Because the same house lost a family member in a blast, or in a target killing incident. A father from one house was killed in Bazar. A brother from another house lost his life in a blast that targeted a bus that carried pilgrims from Karbala and the stories are never ending. Just for the simple reason that they belonged to a certain group of people who are pretending to be sleeping bears with no intentions to wake up anytime soon.

    Some people head towards the masjid in the morning of Eid not to offer Eid prayers but because they have to attend a fatiha and  mourn the death of their dear ones.

    Eid has totally lost it’s colorfulness in my society. It’s just is a tradition now.

    But I believe that there will be a day when I and my kinsmen and my fellows will truly experience the real sweet taste of Eid and enjoy the festival just as I used to enjoy it when I was an innocent kid who possessed a mind drowned in peace.!

    0 0

    Argentina and Germany might be in a battle zone but The streets of Pak aren’t any less the any Gladiating Arenas.
    Yes! Well There are predicting monkeys and elephants in the country right now, profiles have turned into flag painted faces and Quetta isn’t far behind.
    In a city where terrorism is almost always at its peak and citizens never turn to the fresh delights of the night, this Ramadan is completely different.

    wpid-wp-1405280991553.jpeg

    Alamdar Road among many have people sitting on roads and streets bare footed and on carpets. Computer monitor have turned into road theaters and TV sets into plasma screens.

    10518692_668811569854540_1509996913477836144_n

    Well it’s more of a race then a football game here…. People upon hearing the slightest of busted sounds think it’s a bomb or even an attack, but that doesn’t stop them from going back to the game.
    It might not be all good or all bad but everyone’s trying to ha e to most of it.
    Shake points and pizza or baroque huts are getting the most out it for their business.

    wpid-wp-1405281181028.jpeg

    Men are enjoying shakes on the road and women in during in Bbques at homes with a warm cup of green tea.
    The scene is warm and beautiful and it is a war.

    A battle zone it is. Quetta on the roads seems beautiful this time of the year.

    0 0

    (  تحریر: لا ل خان    بشکریہ سٹراگل ڈاٹ کام          (  کاوش : غلام نبی کریمی 23

      مارچ  1931ء کو برطانوی سامراج اور سرمایہ داری سے برِ صغیرِہند کے عوام کی آزادی اور نجات کے انقلابی ہیرو بھگت سنگھ اور اس جدوجہد میں شریک اس کے کامریڈوں سکھ دیو تھاپر اور شیوا رامراج گرو کو لاہور سینٹرل جیل میں تختہ دار پرلٹکا دیا گیا تھا۔برطانوی سامراجی حکومت اپنے خلاف عوامی تحریک میں بائیں بازو کے ریڈیکل رجحان کے ابھرنے سے بہت خوفزدہ تھی۔ ان نوجوان انقلابیوں کو تو موت کی نیند سلا دیا گیا لیکن ان کے قتل کے بعد ابھرنے والے عوامی غم و غصے اور بغاوت نے نو آبادیاتی حکومت کو ہلا کر رکھ دیا۔ ہندوستان کی صورتحال کے متعلق 1932ء میں یہاں آئے ہوئے ایک برطانوی پادری سی ایف اینڈریوز نے لکھا کہ ’’ ہندوستان کی موجودوہ کیفیت انیس سو سال قبل کی سلطنتِ روم جیسی ہے۔ وہاں بھی ظاہری طور پر ایسا ہی شاندار امن قائم تھا،لیکن بظاہر پر امن نظر آنے والےاس علاقے کے اندر ایک سلگتا ہوا خلفشار یک دم آتش فشانی لاوے کی طرح دھرتی کو پھاڑکر باہر آنا شروع ہو گیا ہے‘‘۔

    1917ء میں روس میں ہونے والے بالشویک انقلاب نے ہندوستان کی تحریک آزادی کو بہت متاثر کیا اور ساری دنیا کی طرح یہاں بھی اس کے بہت بڑے اثرات مرتب ہوئے۔ خصوصاً نوجوان اس انقلابی ابھار سے بہت متحرک ہوئے۔ ہندوستان سوشلسٹ ریولوشنری آرمی (ایچ ایس آر اے)   کا قیام سماجی شعور میں آتی ہوئی تبدیلی کا اظہار تھا۔ بھگت سنگھ، سکھ دیو، راج گرو، چندر شیکھر آزاد، بی کے دت اور دیگر نوجوان انقلابیوں کے جرات مند کارناموں نے پورے برِ صغیر میں محکوم عوام کو جھنجوڑ کر رکھ دیا،لیکن ایک مارکسسٹ لینن اسٹ پارٹی کی عدم موجودگی میں انقلاب کے لئے سائنسی لائحہ عمل نہ مل پانے کی وجہ سے ان نوجوانوں نے مسلح جدوجہد اور انفرادی دہشت گردی کا طریقہ اختیار کیا۔

    لاہور ریلوے اسٹیشن پر سائمن کمیشن کے خلاف مظاہرہ کرتے ہوئے کسانوں کے ریڈکل رہنما لالہ لجپت رائے پر پولیس کے بہیمانہ تشدد اور شدید زخمی کرنے کے بعد واقعات کے اس سلسلے کا آغاز ہوا۔ 17  نومبر  1928ء کو وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔ انتقاماً ایچ ایس آر اے کے چند مسلح کارکنان نے 8  اپریل 1929ء کو اسسٹنٹ سپریٹنڈنٹ پولیس جان پویانٹس سانڈرز کو گولی مار کر قتل کر دیا۔ بھگت سنگھ اور دوسرے کامریڈوں کو اس قتل اور دہلی میں مرکزی قانون ساز اسمبلی کے سرکاری بنچوں پر احتجاجاًبے ضرر بم پھینکنے کے الزام میں گرفتار کر لیا گیا۔ پانچ ماہ تک ان پر مقدمہ چلایا گیا جس کی کاروائی کے دوران ملزمان کے انقلابی بیانات نوجوانوں کو گرما تے رہے اور ان کی تحریک کو عوامی حمایت حاصل ہو گئی۔ اس سے نہ صرف سامراجی اقتدار کے ایوان بلکہ نام نہاد آزادی پسند مقامی بورژوا لیڈران بھی لرز اٹھے جو خوفزدہ تھے کہ اس ریڈیکل رجحان کے ہاتھوں وہ جدوجہدِ آزادی کی قیادت سے باہر ہو جائیں گے۔

    اکتوبر  1930ء کو جسٹس اے آر کولڈ سٹریم نے فیصلہ سنا دیا۔ حکومت نے لاہور سازش کیس آرڈیننس جاری کیا جس کی رو سے سماعت کے دوران وکیلِ صفائی، گواہان اور ملزمان کی موجودگی کی ضرورت ختم کر دی گئی۔ شواہد سے ثابت ہوتا ہے کہ ’عدم تشدد کا علمبردار‘گاندھی اس وقت کے برطانوی وائسرائے لارڈ اروِن کے ساتھ مذاکرات اور معاہدے کے دوران رحم کی اپیل کر کے ان انقلابیوں کی زندگیاں بچا سکتا تھا۔ گاندھی اروِن معاہدہ19 مارچ 1931ء کو طے پایا جس میں تیج بہادر سپرو اوردیگر نے ثالثی کا کردار ادا کیا۔ عوام میں اس معاہدے کے خلاف شدید نفرت اور غصہ تھا کیونکہ اس میں بھگت سنگھ، راج گرو اور سکھ دیو کو نظر انداز کر دیا گیا تھا۔ کانگریس کے اہم رہنما ڈاکٹر سبھاش چندر بوس نے انتہائی غصے کے عالم میں کہا کہ’’ہمارے اور برطانویوں کے درمیان خون کا ایک دریا اور لاشوں کا ایک پہاڑ کھڑا ہے۔ گاندھی کی جانب سے کیے گئے سمجھوتے کو ہم کسی صورت قبول نہیں کر سکتے۔‘‘ گاندھی اور اروِن کی ملاقات کے دن بھگت سنگھ اور اس کے ساتھیوں نے وائسرائے کو ایک خط بھیجا۔ رحم کی اپیل کی بجائے انہوں نے جنگی قیدیوں جیسے سلوک اور پھانسی کی بجائے گولی کے ذریعے موت کا مطالبہ کیا۔ بعد ازاں کراچی میں ہونے والی آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی سی سی)کے اجلاس میں یہ نعرہ لگتا رہا کہ ’’ گاندھی کے معاہدے نے بھگت سنگھ کو مار ڈالا‘‘۔

    بھگت سنگھ کی شہادت کی کئی دہائیوں بعد ہندوستان اور پاکستان میں منظرِ عام پر موجود دانشوروں اور سیاسی اشرافیہ نے اس کی میراث کو مسخ کر دیا ہے۔ پاکستان میں ماضی پرست ریاستی قوتوں اور قدامت پرست اشرافیہ نے اسے ’کافر‘ قرار دے کر اس کے حقیقی نظریات پر پردہ ڈالنے کی ہر ممکن کوشش کی۔ ہندوستان میں اس کے تشخص کو ایک حریت پسند قوم پرست تک محدود کر دیا گیا ہے اور اس کے سوشلسٹ اور انقلابی کردار کو داغدار اور مسخ کیا گیا ہے۔ اگرچہ برطانوی راج کے خلاف جدوجہد کے آغاز سے ہی بھگت سنگھ کوئی مارکسسٹ نہیں تھا، لیکن مسلح جدوجہد کے تجربات اور مارکس، اینگلز، لینن اور ٹراٹسکی کو پڑھنے کے بعد رفتہ رفتہ وہ بالشویزم اورانقلابی سوشلزم کے قریب آچکا تھا۔ بھگت سنگھ آرکایؤز میں ایک اخباری رپورٹ موجود ہے جس میں لکھا ہے کہ’’21  جنوری  1930ء کو لاہور سازش کیس کے ملزمان کو عدالت میں پیش کیا گیا جنہوں نے سر پر سرخ پٹیاں باندھ ررکھی تھیں۔ مجسٹریٹ کے بیٹھتے ہی وہ نعرے لگانا شروع ہو گئے کہ ’لینن کا نام امر ہے‘ اور’سامراج مردہ باد‘۔ پھر بھگت سنگھ نے عدالت میں ایک ٹیلی گرام کا متن پڑھا اور مجسٹریٹ سے مطالبہ کیا کہ اسے تیسری انٹر نیشنل کو ارسال کیا جائے‘‘۔ شری رام بخشی نے اپنی کتاب ’بھگت سنگھ اور اس کا نظریہ‘ میں بھگت سنگھ کا قول لکھا ہے کہ’ ’انقلاب سے ہماری مراد ایک ایسے سماجی نظام کا قیام ہے جس میں پرولتاریہ کا اقتدار تسلیم ہو اور ایک عالمگیر فیڈریشن کے ذریعے نسلِ انسانی سرمایہ داری، مصائب اور سامراجی جنگوں کی غلامی سے آزادی پا لے۔ ‘‘

    یہ اور ایسے کئی اور اقوال اس بات کا واضح ثبوت ہیں کہ بھگت سنگھ قوم پرست نہیں بلکہ عالمگیر یت کا داعی تھا۔ وہ مارکسی پوزیشن کے بہت قریب پہنچ چکا تھا اور اس کا ماننا تھا کہ بر صغیرِ ہند میں ایک سوشلسٹ انقلاب ہی تحریک آزادی کا منطقی انجام ہے۔ یہاں ایک سوشلسٹ فتح ساری دنیا میں انقلاب کے پھیلاؤ کا نکتہ آغاز ہو گی۔ بھگت سنگھ اوراس کے کامریڈوں کو مقامی اشرافیہ (جنہیں ’بھُورے صاحب‘ بھی کہا جاتا تھا) کے غداری پر مبنی کردار کے متعلق کوئی غلط فہمی نہ تھی۔ بہت تحقیق پر مبنی راج کمار سنتوشی کی 2002ء میں بننے والی فلم ’دی لیجنڈ آف بھگت سنگھ میں بھگت سنگھ تقریر میں کہتا ہے کہ’’ہمیں آزادی نہیں چاہیے! ہمیں ایسی آزادی نہیں چاہیے جہاں انگریز حکمرانوں کی جگہ مقامی اشرافیہ لے لیں۔ ہمیں ایسی آزادی نہیں چاہیے جس میں غلامی اور استحصال پر مبنی یہ بوسیدہ نظام قائم رہے۔ ہماری لڑائی ایسی آزادی کے لیے ہے جو اس ظالمانہ نظام کو ایک سوشلسٹ انقلاب کے ذریعے بدل کر رکھ دے۔ ‘‘ خونی تقسیم کے بعد نام نہاد آزادی کے پینسٹھ برسوں میں جنوبی ایشیا کے ان حکمران طبقات نے سماج کو تاراج اور کروڑوں عوام کو برباد کر ڈالا ہے۔ یہ مجبور طبقات استحصال، سامراجی لوٹ مار، مصائب،غربت اور بیماری کے ہاتھوں تباہ ہو گئے ہیں۔ نئی نسلوں کی یہ تاریخی ذمہ داری ہے کہ بھگت سنگھ کی انقلابی میراث کو پھر سے تلاش کرتے ہوئے اس مقصد کی تکمیل کریں جس کے لئے وہ جیا، لڑا اور اپنی جان قربان کی۔

    %d bloggers like this:
    Skip to toolbar